ⓘ Free online encyclopedia. Did you know? page 200




                                               

پطرس اعظم

پطرس اعظم یا پیٹر اعظم یا 30 مئی 1672ء - وفات: 8 فروری 1725ء یا 28 جنوری 1725ء) سلطنت روس کا شہنشاہ تھا۔ پطرس کا تعلق روس کے روسی زار شاہی خاندان سے تھا۔ اُس نے 1682ء سے 1725ء تک حکومت کی۔اُسے روس کا بیدار مغز شہنشاہ بھی کہا جاتا ہے۔

                                               

کلنگ

بادشاہ اشوک کے تیرہویں ریکارڈ کے مطابق اس نے اپنی تاجپوشی کے آٹھ سال کے بعد كلنگ کی تاریخی جنگ لڑی۔ كلنگ فتح اس کی آخری فتح تھی۔ یہ جنگ 262-261 ق م میں لڑی گئی تھی

                                               

امارت آل عائض

امارت آل عائض خطہ عسير میں "امارت آل المتحمی" کے زوال کے بعد قائم ہونے والی سلطنت جس کے حکمراں خاندان آل یزید سے تعلق رکھتے تھے اس خاندان میں سب سے پہلے عائض بن مرعی نے 1249ھ میں اقتدار سنبھالا اور پھر اسی خاندان کے آخری حکمراں حسن بن علی کو سعود ...

                                               

ثمود

ثمود قدیم جزیرۃ العرب کی قوم جو پہلے ہزارے ق م سے تقریباً محمدﷺ کے عہد تک رہے ہیں۔ قوم کے مورثِ اعلیٰ کا نام ثمود تھا اور مشہور نسب نامہ یہ ہے۔ ثمود بن جشیر بن ارِم بن سام بن نوح علیہ السلام۔ عاد جس طرح جنوبی اور مشرقی عرب کے مالک تھے، ثمود اس کے ...

                                               

حسین ابن علی (شریف مکہ)

سید حسین ابن علی ہاشمی تھے۔ یہ اہل بیت سے ہونے کی وجہ سے 1908ء میں شریف مکہ بنے۔ پہلی جنگ عظیم میں جب انگریزوں کو ترکوں کے خلاف کو کوئی کامیابی حاصل نہیں ہو رہی تھی ایک انگریز جاسوس لارنس آف عریبیہ کے ساتھ مل کر خلافت عثمانیہ کے خلاف بغاوت کر دی ...

                                               

خولہ بنت ازور

خولہ بنت ازور کا نام تاریخ کے اوراق میں اس طرح محفوظ ہے کہ وہ ایک بہادر خاتون تھیں، جس نے فتوح الشام کی سلسلہ وار جنگوں میں حصہ لیا، زخمیوں کی مرہم پٹی کرنا، فوجیوں کو پانی پلانا اور بوقت ضرورت مسلح ہو کر دشمن فوجوں کا مقابلہ کرنا ان کی شجاعت اور ...

                                               

ذو نواس

ذو نواس یا یوسف بن شراحبیل ایک ایسا ظالم بادشاہ تھا جس نے بہت سے اہل ایمان کو قتل کیا۔ اللہ تعالٰی نے قرآن کریم کی سورہ بروج میں اسی واقعہ کی طرف اشارہ کیا ہے۔ ذو نواس یہودی تھا اور اس کا تعلق یمن کے ایک قبیلے حمیر سے تھا۔

                                               

سعودی عراقی غیر جانبدار علاقہ

سعودی عراقی غیر جانبدار علاقہ سعودی عرب اور عراق کے درمیان سرحد پر 7044 مربع کلومیٹر کا علاقہ تھا جس کا تصفیہ نہیں ہوا تھا۔ 5 مئی، 1922ء کو معاہدہ خرمشھر میں برطانوی زیر حمایت تعہدی عراق اور سلطنت نجد کے درمیان تنازع کا باعث بنا۔ معاہدہ میں خاص ط ...

                                               

شریف مکہ

شریفِ مکّہ کا منصب فاطمینِ مصر کے دور میں 967ء میں قائم کیا گیا۔ پہلے شریف مکّہ تیمون تھے، جو 13 سال تک اس منصب پر فائز رہے۔ شریفِ مکّہ کا منصب رکھنے والی شخصیت کی بنیادی ذمہ داری مکّہ معظمہ اور مدینہ منوّرہ میں عازمین حجّ و عمرہ کا انتظام و انصر ...

                                               

عتیبہ

عتیبہ سعودی عرب میں ایک قبیلہ ہے ۔ سعودی شاہی خاندان کے بہت سارے افراد کا ماؤں کے سلسلہ سے اسی قبیلے سےتعلق ہے جو پورے سعودی عرب اور مشرق وسطی میں تقسیم ہوتا ہے۔ عتیبہ قبیلہ بدوؤںسے بنا ہے۔ ان کا سلسلہ مضر خاندان سے جا ملتا ہے اور قیس علیان سے تع ...

                                               

قومی یوم سعودی عرب

قومی یوم سعودی عرب سعودی عرب میں ہر سال 23 ستمبر کو منایا جاتا ہے۔ یہ دن 1932 میں عبد العزیز بن عبد الرحمن آل سعود کے ذریعے سعودی عرب کے یوم تاسیس کے طور پر منایا جاتا ہے۔ اس یوم کی مناسبت سے تمام سرکاری ادارے بند رہتے ہیں۔

                                               

مکہ کی لڑائی (1924ء)

سانچہ:Campaignbox Saudi conquest of Hejaz مکہ کی لڑائی مکہ شہر میں ہوئی جو مسلمانوں کا مقدس شہر ہے اور آج کے سعودی عرب میں واقع ہے، زوال طائف کے بعد عبد العزیز بن عبد الرحمن آل سعود کی فوجوں نے مملکت حجاز فتح کر لی۔ حسین ابن علی مکہ سے جدہ سے بھا ...

                                               

وادی القریٰ

اس کو وادی القریٰ یعنی بستیوں کی وادی کہا جاتا ہے کیونکہ اس میں بہت سی بستیاں آباد تھیں۔ یہ بہت ہی قدیم دور سے آباد ہے۔ عرب بائدہ کی قوم ثمود اسی وادی کے علاقے مدائن صالح میں آباد تھی۔ ان کے آثار آج بھی یہاں ملتے ہیں۔ وادی القریٰ اپنی سرسبزی وشاد ...

                                               

معرکۂ استالن گراد

معرکۂ استالن گراد دوسری جنگ عظیم کا سب سے اہم موڑ تھا اور اسے انسانی تاریخ کی خونی ترین جنگ سمجھا جاتا ہے، جس میں تاریخ کی سب سے زیادہ دو طرفہ ہلاکتیں ہوئیں۔ یہ جنگ عسکری و شہری پر دونوں سطح پر فریقین کی جانب سے ظلم و سفاکیت کی مثال ہے۔ اس معرکے ...

                                               

اسکندر شاہ (راجہ پرمیشور)

اسکندر شاہ: (1344-1414، انگریزی:(Parameswara (king ، "مملکت سنگاپورہ" ہندو مملکت کا پانچواں آخری راجہ، بانی سلطنت ملاکا جو مسلمان ہوگیاتھا۔ 1389 سے 1398 تک حکمرانی کی ۔ وہ سنگاپور کی جزیرہ بادشاہی کا ہندو اور راجہ تھا ، لیکن سنہ 1398 میں ماجاپاہت ...

                                               

سنگاپور کی تاریخ

سنگاپور کی تاریخ تیسری صدی عیسوی سے شروع ہوتی ہے۔ حقائق اشارہ کرتے ہیں کہ 14ویں صدی عیسوی میں سنگاپور میں تجارتی بستیاں آباد تھیں۔14ویں صدی کے اخیر میں مملکت سنگاپورہ پرمیشور کے زیر نگیں تھا جسے بعد میں ماجا پاہی یا سیامیس نے بھگا دیا۔اس کے بعد و ...

                                               

روسی لبریشن موومنٹ

روسی لبریشن موومنٹ سوویت یونین کے اندر ایک ایسی تحریک تھی جس نے دوسری جنگ عظیم کے دوران ایک کمیونسٹ مخالف مسلح قوت بنانے کی کوشش کی تھی جو جوزف اسٹالن کی حکومت کا خاتمہ کرے گی۔ اس تحریک میں روسی اور سوویت یونین کے اندر مقیم دیگر قومیتوں کے لوگ دو ...

                                               

مولوتوف – ربنٹروپ معاہدہ

مولوتوف – ربنٹروپ معاہدہ نازی جرمنی اور سوویت یونین کے مابین عدم جارحیت کا معاہدہ تھا جس نے ان دو طاقتوں کو پولینڈ کو اپنے درمیان تقسیم کرنے کے قابل بنا دیا۔ ماسکو میں 23 اگست 1939 کو اس معاہدے پر جرمنی کے وزیر خارجہ جواچم وان ربنٹروپ اور سوویت و ...

                                               

محمد احمد

محمد احمد بن سید عبد اللہ سوڈان کی ایک معروف شخصیت ہیں جنہیں ملک میں تحریک اسلامی کا بانی تسلیم کیا جاتا ہے۔ وہ انگریزوں اور مصریوں کی جارحیت کے خلاف جہاد اور شریعت اسلامی کے نفاذ کے باعث دنیا بھر میں مشہور ہوئے۔

                                               

سامی قوم (ناروے)

ناروے یورپ میں واقع ہے۔ یہ اسکینڈے نیویا کا ایک سرسبز و شاداب اور خوشحال ملک ہے، جہاں امریکا کے ریڈ انڈین اور آسٹریلیا کے ایبوریجنل کی طرح کچھ قدیم باشندے آباد ہیں، جو سامی کہلاتے ہیں۔ اس وقت ناروے میں ان لوگوں کی تعداد تیس ہزار 3000 کے لگ بھگ ہے ...

                                               

وائی کنگ

وائی کنگ اسکاندینیویا کے ایسے مہم جو، جنگجو، تاجر اور قزاق تھے جنہوں نے آٹھویں صدی کے اواخر سے گیارہویں صدی کے اوائل تک یورپ کے وسیع علاقے پر یورش کی اور انہیں اپنی نو آبادی بنایا۔ ان باشندوں نے اپنی مشہور لمبی کشتیوں سے مشرق میں قسطنطنیہ اور روس ...

                                               

اسکندرون

اسکندرون ترکی کے جنوب مشرقی صوبہ حطائے کا ایک شہر ہے جو بحیرۂ روم کے کنارے خلیج اسکندرون پر واقع ہے۔ 2000ء کی مردم شماری کے مطابق اس کی آبادی 159،149 ہے۔ اسکندرون ایک مصروف تجارتی مرکز اور بحیرۂ روم کے ساحلی علاقوں پر ترکی کی ایک اہم بندرگاہ ہے۔ ...

                                               

صلاح الدین ایوبی

الناصر صلاح الدین بن یوسف بن ایوب جنہیں عام طور پر صلاح الدین ایوبی کے نام سے جانا جاتا ہے ایوبی سلطنت کے بانی تھے۔ وہ نہ صرف تاریخ اسلام بلکہ تاریخ عالم کے مشہور ترین فاتحین و حکمرانوں میں سے ایک ہیں۔ وہ 1138ء میں موجودہ عراق کے شہر تکریت میں پی ...

                                               

عماد الدین زنگی

عماد الدین زنگی سلجوقی حکومت کی طرف سے شہر موصل کا حاکم تھا۔ جب سلجوقی حکومت کمزور ہو گئی تو اس نے زنگی سلطنت قائم کرلی اورعیسائیوں کو شکستوں پر شکستیں دے کر ان کی چار میں سے ایک صلیبی ریاست ایڈیسا کا خاتمہ کر دیا جو صلیبیوں نے پہلی صلیبی جنگ کے ...

                                               

جنگ چالدران

عثمانی ترکوں اور صفوی ایرانیوں کے درمیان 23 اگست 1514ء کو ہونے والی ایک جنگ جس میں عثمانیوں نے فیصلہ کن فتح حاصل کی جس کے نتیجے میں اناطولیہ کا مشرقی حصہ بھی عثمانی سلطنت کا حصہ بن گیا۔ جنگ میں عثمانی افواج کی تعداد 2 لاکھ تھی جبکہ ایرانیوں کی تع ...

                                               

حموربی

حموربی اٹھارویں صدی قبل مسیح میں قدیم بابل کے پہلے شاہی خاندان کا چھٹا اور سب سے مشہور بادشاہ گزرا ہے۔ سمیر اور اکاد ’’جنوبی عراق‘‘ کی شہری ریاستوں کو اپنی قلمرو میں شامل کیا اور لرسا کے ایلمی بادشاہ کو شکست دے کر اس کے علاقے پر قبضہ کر لیا۔ مگر ...

                                               

فیصل بن حسین

شاہ فیصل بن حسین بن علی ہاشمی عراق کے پہلے حکمران تھے جنہوں نے عربوں کی تحریک آزادی میں بڑی بیدار مغزی سے حصہ لیا تھا۔ شریف حسین کے سب سے بڑے بیٹے تھے۔ 20 مئی 1883ء کو طائف میں پیدا ہوئے۔ مشروطی حکومت کے قیام کے بعد جدہ سے عثمانی پارلیمنٹ کے رکن ...

                                               

محاصرۂ کوت

محاصرۂ کوت 7 دسمبر 1915ء سے 29 اپریل 1916ء تک جاری رہنے والا پہلی جنگ عظیم کا ایک اہم معرکہ تھا جو بین النہرین مہم کا حصہ تھا۔ اس معرکے میں سلطنت برطانیہ کی افواج کو سلطنت عثمانیہ کے ہاتھوں شکست اٹھانا پڑی تھی۔ اس مہم میں عثمانی افواج کی قیادت خل ...

                                               

سلوقی سلطنت

سکندر اعظم کی موت کے بعد یونانیوں کی کونسل نے سلوکس کو بابل کا حکمران منتخب کیا، جو خود کو نکوٹار کا فاتح کہتا تھا۔ کیوں کہ اس نے مصر کے یونانی حکمران بطلیموس کی مدد سے شام فتح کر لیا بلکہ اس نے ایران کارخ یا اسے فتح کرکے مشرقی علاقوں کو اپنے تسل ...

                                               

فرانسیسی سلطنت دوم

دوسری فرانسیسی سلطنت یا دوسری سلطنت، 1852ء سے 1870ء تک فرانس میں قائم ایک ریاست تھی، یہ دوسری فرانسیسی جمہوریہ اور تیسری فرانسیسی جمہوریہ کے درمیانی عہد میں موجود تھی۔ یہ نپولین سوم کا شاہی دور حکومت تھا۔

                                               

فلپ دوم شاہ فرانس

فلپ ثانی یا فلپ دوم یا فلپ آگستس ١١80ء سے لے کر اپنی وفات تک فرانس کا بادشاہ رہا۔ وہ کاپتی‌ها کا کارکن تھا۔ وہ ضلع وال ڈواز کے شہر گونس میں پیدا ہوا۔ وہ لوئس ہفتم اور اس کی تیسری بیوی ایڈیلی شیمپین کی کا بیٹا تھا۔ وہ لوئس ہفتم کا سب سے پہلا بیٹا ...

                                               

خطۂ بالٹک

دیگر استعمالات کے لیے دیکھیے بالٹک خطہ بالٹک ایک غیر واضح اصطلاح ہے جو بحیرہ بالٹک کے گرد واقع ممالک کے بارے میں مختلف پیرائے میں استعمال کی جاتی ہے۔ سیاق و سباق کی بنیاد پر خطہ بالٹک کی اصطلاح مندرجہ ذیل کے لیے استعمال ہو سکتی ہے: مشرقی پرشیا او ...

                                               

قازقستان کی تاریخ

قازقستان ایسا سب سے بڑا ملک ہے جو مکمل طور سے یوریشیائی مسطح میدانی خطہ کے اندر موجود ہے۔ یہ سرزمین تاریخ میں متعدد لوگوں، قبائل، ریاستوں اور بادشاہوں کا وطن رہی ہے۔

                                               

عثمانی شام

عثمانی شام سے مراد سلطنت عثمانیہ کا سرزمین شام کا حصہ ہے جو بحیرہ روم کے مشرق، دریائے فرات کے مغرب، صحرائے عرب کے شمال اور کوہ طوروس کے جنوب میں واقع ہے۔

                                               

فاطمہ بنت عبداللہ

فاطمہ بنت عبداللہ 14 سالہ معصوم عرب لڑکی تھی جو 1912ء میں اطالوی ترک جنگ میں غازیوں کو پانی پلاتی ہوئی شہید ہوئی اور اس کا ذکر علامہ محمد اقبال نے اپنے مجموعہ کلام بانگ درا کے نظم فاطمہ بنت عبد اللہ میں کیا ہے۔

                                               

منسا موسیٰ

منسا موسیٰ سلطنت مالی کا سب سے مشہور اور نیک نام حکمران رہا ہے جس نے 1312ء سے 1337ء تک حکومت کی۔ اس کے عہد میں مالی کی سلطنت اپنے نقطۂ عروج پر پہنچ گئی۔ منسا کا مطلب بادشاہ ہوتا ہے۔ ٹمبکٹو اور گاد کے مشہور شہر فتح ہوئے اور سلطنت کی حدود مشرق میں ...

                                               

جنگ دبا

جنگ دبا 632ء تا 634ء فتنہ ارتداد کی جنگوں کے دوران میں دبا کے میدانی علاقہ میں لڑی گئی تھی جس میں تقریباً 1000 لوگ قتل ہوئے۔ دبا کا علاقہ موجودہ متحدہ عرب امارات میں واقع ہے۔ جنگ کے مقتولین کی قبروں کے باقیات اب بھی موجود ہیں۔

                                               

حمد بن عبد اللہ الشرقی

حمد بن عبد اللہ الشرقی ریاستہائے ساحل متصالح کی ایک حکومت فجیرہ کا پہلا حاکم تھا۔ موجودہ دور میں بھی یہ خالدان فجیرہ پر حاکم ہے مگر اب یہ علاقہ متحدہ عرب امارات کی حکومت کا حصہ ہے۔ انہوں نے فجیرہ کی نمائندگی کرتے ہوئے متعدد مرتبہ القاسمی پر حملہ ...

                                               

سلیم بن سلطان القاسمی

سلیم بن سلطان القاسمی 1868ء تا 1883ء شارجہ کے حکمران تھے۔ ان کا عہد حکومت غیر معمولی طور پر ہنگامہ خیز رہا ہے اور وہ کئی سازشوں، تنازعات اور ماتحتوں کی آپسی چپلقش کا شکار ہوئے۔ وہ 1868ء تا 1869ء تک کی مختصر سی مدت کے لئے راس الخیمہ کے بھی حکمران ...

                                               

صقر بن خالد القاسمی

صقر بن خالد القاسمی شارجہ) کا حکمران تھا۔ اس نے اپنے چچا سلیم بن سلطان القاسمی کے غیر موجودگی میں شارجہ پر قبضہ کر لیا اور شارجہ کے ساتھ 1900ء تا 1914ء راس الخیمہ پر بھی حکومت کی۔

                                               

ایٹلا

Attila دور406ء۔ ۔۔453ء ہن حملہ آوروں کا سردار جو اپنے آپ کو خدائی قہر کہتا اور اس بات پر فخر کرتا تھا کہ جدھر سے اس کا گزر ہو جائے وہاں گھاس بھی نہیں اگتی۔ سلطنت روما کے دور انحطاط میں یورپ پر 432ء تا 453ء عفریت کی طرح مسلط رہا۔ مشرقی اور مغربی ر ...

                                               

تاریخ مجارستان

ہنگری کی تاریخ صدیوں کے دوران مختلف دوروں سے گزر رہی ہے۔ سانچہ:تاریخ مجارستان قبیلائی سردار ارپیڈ ارپاڈو کی سربراہی میں میگیار کارپیٹین بیسن پہنچے۔ یہ نویں صدی کے آخر میں ہوا۔ سال 907 میں اپنے بیٹوں اور 40،000 فوجیوں کے ساتھ ایرپیڈ نے "تعلیم یافت ...

                                               

آل محمد علی

آل محمد علی مصر و سوڈان پر 19 ویں اور وسط بیسویں صدی تک حکمرانی کرنے والا خاندان تھا۔ اسے اپنے جد اعلٰی اور بانی سلطنت محمد علی پاشا کے نام سے آل محمد علی کے طور پر جانا جاتا ہے، جسے جدید مصر کا بانی سمجھا جاتا ہے۔

                                               

بحری مملوک

مصر و شام کے غلام بادشاہوں کو مملوک کہا جاتا ہے کیونکہ عربی میں مملوک غلام کو کہتے ہیں۔ یہ دو خاندانوں میں تقسیم تھے ایک خاندان بحری مملوکوں کا تھا جنہوں نے 647ھ سے 784ھ تک حکومت کی اور دوسرا خاندان مملوکوں کا تھا جنہوں نے 784ھ سے 922ھ تک حکومت ک ...

                                               

جنگ اہرام

جنگ اہرام جولائی 21 1798ء کو فرانس کے فرمانروا نپولین بوناپارٹ کی زیر قیادت افواج اور مملوکوں کے درمیان لڑی جانے والی ایک جنگ تھی۔ یہ جنگ مصر میں فرانسیسی حملوں کے سلسلے میں لڑی گئی جنگوں کا حصہ تھی جس میں بوناپارٹ نے نئی جنگی حکمت عملی کا استعما ...

                                               

جنگ نیل

جنگ نیل اگست 1798ء کو مصر کی خلیج ابو قیر میں سلطنت برطانیہ اور فرانس کی افواج کے مابین لڑی گئی۔ جس میں ریئر ایڈمرل ہیراٹیو نیلسن کی زیر قیادت برطانوی بحری بیڑے نے اسکندریہ کے قریب لنگر انداز فرانسیسی بحری بیڑے پر اچانک حملہ کر کے اسے زبردست نقصا ...

                                               

خدیو

سلطنت عثمانیہ کے دور میں مصر و سودان کے آخری شاہی خاندان آل محمد علی میں حکمران اعلی کا لقب۔ ابتدا میں یہ حاکم ترکی سے مقرر ہو کر آتے تھے لیکن محمد علی پاشا کے بعد اس کے پوتے اسماعیل پاشا نے خلیفہ سے مصر کی صوبہ داری کے موروثی حق کا سمجھوتہ کر لی ...

                                               

شجر الدر

الملكۃ عصمۃ الدين أم خليل شجر الدر کا شمار تاریخ اسلام کی نہایت اہم ترین خواتین میں ہوتا ہے۔ تاریخ کے ایک ایسے موڑ پر جب ایوبی سلطنت تقریباً ختم ہو چکی تھی اور مسیحی بیت المقدس پر قبضے کے لیے مسلسل آگے بڑھ رہے تھے سلطانہ شجرالدر نے اپنی ذہانت سے ...

                                               

ہرمی ادب

ہرمی ادب ہرم کی جمع اہرام ہے۔ ہرمی ادب کی اصطلاح ان مجموعی تحریرات کے لیے استعمال کی جاتی ہے جو قدیم مملکت مصر کے مذہبی تحریروں پر مشتمل ہے۔ یہ ممکنہ طور پر سب سے قدیم معلوم مذہبی متون ہیں۔ جو قدیم مصری زبان میں ہیں۔ قدیم بادشاہت کے عہد میڑ ہرمی ...

                                               

بریڈفورڈ

بریڈفورڈ شمالی برطانیہ کے ریجن یارکشائر کا ایک شہر ہے، جو ماضی میں اون کی ملوں، اونی کپڑوں کی صنعت اور حال میں پاکستانی اور مسلم کمیونٹی کی اکثریت کے باعث مشہور ہے۔ یہ وہ شہر ہے جسے پورے برطانیہ میں سب سے پہلے ایشیائی، مسلم اور پاکستانی محمد عجیب ...